admin

غزل ” غم کے انگاروں کو اک شہرِ نگاراں سمجھا” ۔ 4ستمبر 2019

غزل غم کے انگاروں کو اک شہر۔ نگاراں سمجھا زندگی تجھ کو بہت ہم نے تو آساں سمجھا درد۔دل کو ہی متاع۔دل و جا ں جان لیا مال و دولت کو کہاں زیست کا ساماں سمجھا دل میں پلتی رہی ہر دم ہی تمنائے ثمر ہم نے ویرانئ۔جاں کو بھی نہ ویراں سمجھا کب یہاں …

غزل ” غم کے انگاروں کو اک شہرِ نگاراں سمجھا” ۔ 4ستمبر 2019 Read More »

سلام ” میری بلا سے رہیں خاکِ دشماں حسین رضی اللہ” ۔ 3 ستمبر 2019

سلام مری بلا سے رہیں خاک دشمنانِ حُسین رہے گا ہم پہ سدا ہونہی سائبانِ حُسین یہ آسماں جو سرِ شام سرخ ہوتا ہے لکھی ہے خون سے قدرت نے داستانِ حُسین نہ مال و زر کی تمنا نہ حرص۔جاہ و حشم ہمارے بخت میں لکھ دے تو آستانِ حُسین جگر فگار کبھی ہے الم …

سلام ” میری بلا سے رہیں خاکِ دشماں حسین رضی اللہ” ۔ 3 ستمبر 2019 Read More »

غزل ” خود کو ہم اس کے ہوبہو کرلیں ” 27 اگست 2019

غزل خود کو ہم اس کے ہو بہو کرلیں اور اس میں کو اپنی تو کرلیں اس کو الزام سے بری کر کے خود کو ہم خود کے روبرو کرلیں بھیڑ میں گم جو ہوگیا اس کی اپنے اندر ہی جستجو کرلیں آج پانی بھی دستیاب نہیں کیوں نہ اشکوں سے ہی وضو کرلیں جسم …

غزل ” خود کو ہم اس کے ہوبہو کرلیں ” 27 اگست 2019 Read More »

غزل ” وصل کی شب تھی ” 16اگست 2019

تازہ غزل وصل کی شب تھی، عجب ایک نظارہ دیکھا میں نے جب چاند کے پہلو میں ستارا دیکھا تم نے دیکھا ہے، نہیں ،تم نے کہاں دیکھا ہے میں نے جو ڈوبنے والے کا اشارا دیکھا پھر محبت کے امر ہونے کا ایقان ہوا جب کبھی راکھ ہٹائی تو شرارا دیکھا ایک سا کب …

غزل ” وصل کی شب تھی ” 16اگست 2019 Read More »

نظم “احتساب ” 20 اگست 2019

احتساب سوچتی ہوں کہ قلم توڑ وں لہو سے لکھوں صفحہء ء زیست پہ غم کا نوحہ دور۔پرآشوب ہے ہر روز نیا ظلم لئے شام اتری ہے یہاں شام۔غریباں کی طرح خیمے جلتے ہیں بدن سر سے الگ ہوتے ہیں بہنیں لٹتی ہیں تو بھائی کے جگر کٹتے ہیں ماں کی آہوں سے یہ شب …

نظم “احتساب ” 20 اگست 2019 Read More »

زندگی! گفتگو نمبر :18 ۔۔۔17اگست 2019

ایک سوچ ٹپ ٹپ بوندیں برس رہی ہیں اور میرے دل کی سرزمین بھی اشکوں کی ٹپ ٹپ سے زرخیز ہو رہی ہے جس طرح بارش مٹی کو نم کر رہی ہے اور اس میں سے ہلکی ہلکی سوندی خوشبو امڈ کر فضا میں پھیل رہی ہے اسی طرح میرے آنسو میرے چہرے کو دھو …

زندگی! گفتگو نمبر :18 ۔۔۔17اگست 2019 Read More »

غزل “وطن کو لالہ ءِ گل سے سجائیں گے ہم لوگ ” 13 اگست 2019

وطن کو لالہ ءِ گُل سے سجائیں گے ہم لوگ ہے جشن آج تو ایسے منائیں گے ہم لوگ مقامِ دار سے ہٹ کر طرب کی بزم میں سجے جگر کے زخم مٹا کر ہر اِک دل سے ملیں تنک مزاج زمانے کو خوش کلامی سے نظر نواز کریں اور وفا کے جام بھریں یوں …

غزل “وطن کو لالہ ءِ گل سے سجائیں گے ہم لوگ ” 13 اگست 2019 Read More »

غزل”گزرچکی ہے جو اک داستاں ساحل پر” ۔۔۔14-جولائی 2019

غزل۔۔۔ گزر چکی ہے جو اک داستان ساحل پر سنا رہا ہے وہ اک نوجوان ساحل پر ہجوم دیکھ کے ساحل پہ ایسا لگتا ہے ہواوں کو بھی ملا ہے گیان ساحل پر ابھرتی موجوں سے شکوہ ہوا مرا بےسود بنا رہا ہے کوئی اب مکان ساحل پر نہ جانے کون ہے اس پار آنے …

غزل”گزرچکی ہے جو اک داستاں ساحل پر” ۔۔۔14-جولائی 2019 Read More »

Scroll to Top