تعارف

رضیہ سبحان جو شادی کے بعد رضیہ سبحان قریشی ہوگئی ـ آبائی تعلق مدراس سے ہے لیکن 9 سال کی عمر میں والد صاحب کا انتقال ہوگیا جس کے بعد پرورش، تربیت کی غرض سے شریف المجاہد صاحب کے پاس پاکستان بھیج دیا گیا
جن کا ذکر پاکستان کی تاریخ میں بہت عزت کے ساتھ ملتا ہے ـ انہی کی تربیت میں تعلیم کا مرحلہ بخوبی چلا ـ انگریزی ادب میں ماسٹرز کرنے سے قبل ہی کراچی کے سٹی کالج (موجودہ عبداللہ کالج) میں ملازمت مل گئی جو 37 سال تک جاری رہی اور الحمد للہ پرنسپل کے عہدے کے ساتھ ریٹائر ہوئی ـ دوران تعلیم شاعری کی لگن پروان چڑھتی رہی بلکہ آٹھویں کلاس میں باقاعدہ شعر بھی کہنا شروع کیا لیکن تعلیمی سلسلے کی فکر کی بناء پر اسے فی الحال موقوف کرنا پڑا

رنگ برش سے کھیلنا بھی انہی خواہشات میں سے ایک ہے اب ریٹائرمنٹ کے بعد اس شوق کو وقت دے رہی ہوں ـ اب ملازمت اور بچوں کی ذمہ داریوں سے فارغ ہوں لہٰذا کچھ توجہ اپنے شعری مجموعے کی اشاعت کی جانب کی ہے ـ

اعزاز

Scroll to Top