نظم ” درگزر” ۔ 14ستمبر 2019

نظم “درگزر”

میرا دل ہر رات مجھ سے یہی کہتا ہے
ہر درد کو جانے دو
ہر تکلیف کو بھول جائو
خالص رہو
جیسے تم ہمیشہ سے تھیں
معاف کردو
اِنہیں بھی اور خود کو بھی
آزاد کردو
اِنہیں بھی اور خود کو بھی
چونکہ آنے والا کل
نیا سورج لیکر طلوع ہوگا
تو اِس وقت
دل سے نفرت نکال پھینکو
اور
محبت اوڑھ کر سو جاو

رضیہ سبحان
14-9-2019

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top