غزل ۔ اپریل 2020

غزل
زخمِ کو زخم جگر چاہے تو کہہ لے بے شک
درد کے راگ کو نغمات سے بھر لے بے شک
مجھ کو اک مرکزِ ایماں پہ رک جانا ہے
آسماں رنگ بدلتا ہے تو بدلے بے شک
کاسہءِ دل کو محبت سے میں لبریز رکھوں
میرے اس جرم پہ تو چاہے یہ سر لے بے شک
چھیل کر شاخ غمِ زیست کی شاداب ہوئی
تو مرا جام۔طرب زہر سے بھر لے بے شک
اک نیا کچھ تو مزا ہے یہاں پیچ و خم میں
ٹھوکریں کھاکے یہاں پر کوئی سنبھلے بے شک
یہ جو اک جرمِ محبت ہے کئے جائوں سدا
مجھ کو الزامِ محبت میں تو دھر لے بے شک

رضیہ سبحان
9-4-2020

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top