غزل ” غم کے انگاروں کو اک شہرِ نگاراں سمجھا” ۔ 4ستمبر 2019

غزل
غم کے انگاروں کو اک شہر۔ نگاراں سمجھا
زندگی تجھ کو بہت ہم نے تو آساں سمجھا
درد۔دل کو ہی متاع۔دل و جا ں جان لیا
مال و دولت کو کہاں زیست کا ساماں سمجھا
دل میں پلتی رہی ہر دم ہی تمنائے ثمر
ہم نے ویرانئ۔جاں کو بھی نہ ویراں سمجھا
کب یہاں ملتا ہے شاہوں کو گداوں کا خراج
بات کو تو نے کہاں اے دل۔ناداں سمجھا
دنیا داری کا ملمع سا چڑھا تھا جس کو
چشم۔حیرت نے تیرے حسن کو حیراں سمجھا
وہ نگاہوں کا حقیقت میں مری دھوکہ رہا
وسعت۔عرش تھا رضیہ جسے زنداں سمجھا

4-9-2019

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top