غزل “بہت چرچے ہیں اس کی بے بسی کے” ۔۔۔ 23جون2019

تازہ غزل

بہت چرچے ہیں اُس کی بے بسی کے
ہیں پیچیدہ مراحل زندگی کے
سیاہی سے سفیدی کے سفر تک
ہزاروں سلسلے ہیں روشنی کے
مہر چپ کی لگی ہونٹوں پہ ایسی
کئ عنواں بنے اس خامشی کے
عجب اک خول دنیا پر چڑھا ہے
کبھی پیکر تھے یہ ہی سادگی کے
بظاہر بے ضرر معصوم بچے
نمائندہ ہوئے ہیں عاشقی کے
نہیں ایثار و سمجھوتہ ہی کافی
تقاضے اور بھی ہیں دوستی کے
سرِ تسلیم خم لب پہ تشکر
یہی آداب تو ہیں بندگی کے

رضیہ سبحان
23-6-19

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top