سلام ” میری بلا سے رہیں خاکِ دشماں حسین رضی اللہ” ۔ 3 ستمبر 2019

سلام
مری بلا سے رہیں خاک دشمنانِ حُسین
رہے گا ہم پہ سدا ہونہی سائبانِ حُسین
یہ آسماں جو سرِ شام سرخ ہوتا ہے
لکھی ہے خون سے قدرت نے داستانِ حُسین
نہ مال و زر کی تمنا نہ حرص۔جاہ و حشم
ہمارے بخت میں لکھ دے تو آستانِ حُسین
جگر فگار کبھی ہے الم نصیب کبھی
مگر رہے ہیں سدا فخرِ آسمانِ حُسین
شرار غم کے کھلے اور شفق کے پھول بنے
بھنور میں ہم نے جو تھاما ہے بادبانِ حُسین
قلم میں تاب کہاں لکھ سکے کوئی قصہ
” نہ داستاں ہے کوئی مثلِ داستانِ حُسین”
ہمیں بھی کاش ہو توفیق حق نوائی کی
ادائے حق پہ رہی ہے سدا زبانِ حُسین

ہدیہ عقیدت : رضیہ سبحان
3-9-21

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top