زندگی!گفتگونمبر 9۔۔۔16مئی19

زندگی __ گفتگو نمبر:9
دوستو!
میں نے ہمیشہ سے یہی سنا ہے کہ لوگوں سے پیار نہ کرو، کسی سے دل نہ لگائو یا کسی کو دل سے نہ لگائو. تکلیف، دکھ اور غم کے سوا کچھ نہ ملے گا. کسی حد تک یہ درست بھی ہے. مگر میرا ردعمل ان باتوں سے ہٹ کر مختلف ہی رہا ہے. سوچتی ہوں اگر لوگوں سے کسی غرض یا مطلب سے پیار کیا جائے تو پھر یہ ان کا بھی حق ہے کہ وہ مجھے مایوس کریں، دکھ دیں یا نقصان پہنچائیں کیونکہ یہاں انسان کی ذات سے نہیں بلکہ طمع سے پیار کیا گیا.
انسان کو پیار کیا جاتا ہے اسے عزت دی جاتی ہے. اُسے ہرگز ہرگز ذاتی مفاد کےلئے استعمال نہیں کیا جاسکتا.
اگر اپنی روایات و اقدار پر قائم رہ کر انسان سے محبت کی جائے، انسانیت کی عزت کی جائے تو یقیناً انسانوں سے دکھ نہیں مل سکتا، میں جب اپنے آپ کو یہ باآور کراتی ہوں کہ مجھے دنیا سے پیار ہے کسی خاص انسان سے نہیں تو ایسا محسوس ہوتا ہے جیسے اس پیار میں بلا کی وسعت ہے. اس میں انسانوں کے ساتھ ساتھ دنیا کی ہر شے سما گئ ہے __ میں ہمیشہ اپنے اس پیار بھرے رویے سے بےحد مطمئن رہی ہوں، میرا چہرہ مسکراتا رہا ہے. اس پر فکرو غم و اندوہ کی جھریاں نہیں پڑسکتیں کیونکہ میں محبت بانٹتی ہوں محبت تلاش کرتی ہوں.
اگر مسکراہٹ کا جواب زمانہ تلخی سے دے تو بھی جواب میں مسکرا دیا جائے ، یہ جانتے ہوئے بھی کہ دنیا پریشان کرنے کے علاوہ کچھ نہیں کرتی پھر بھی اپنی چاہت میں ثابت قدم رہاجائے، اپنے چہرے پر منافقت سے پاک سچی مسکان سجاکر ایثار و خلوص کے پیغام کو عام کیا جائے تاکہ دنیا میرے آپ کے بارے میں بے ساختہ کہے کہ
کسی بھی نام سے مجھ کو پکارو
محبت کی زبان تو عالمی ہے
کیا سمجھے!!!

از رضیہ سبحان
17-5-19

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top